سٹیٹ بینک آف پاکستان ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ خسارے کے شکار

کراچی (صوابی ٹائمز نیوز) کاروباری اداروں کا خسارہ دفاعی بجٹ سے زیادہ ہوگیا۔ مالی سال 19ء-2018ء کے دوران حکومت کے کاروباری اداروں نے ایک ہزار 622 ارب روپے کا خسارہ کیا۔ اسٹیٹ بینک بھی خسارے کے ڈنک سے نہ بچ سکی، میرا نہیں خیال کہ کسی نے یہ سوچا بھی ہوگا کہ پاکستان کو یہ دن بھی دیکھنا ہوگا۔

Advertisements
Sponsored by Al-Muslim Schools

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی کتابوں میں کبھی نقصان درج ہی نہیں ہوا تھا مگر اس مرتبہ پہلے ہی سال یہ تاریخ بھی رقم ہوگئی کہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان کہ جس کے پاس ملک کے تمام منقولہ اثاثے (سونا، بانڈز، زرِمبادلہ ذخائر) ہوتے ہیں، وہ ادارہ بھی خسارے کا شکار ہوگیا ہے۔

اسٹیٹ بینک نے 30 جون کو ختم ہونے والے مالی سال کی بیلنس شیٹ ظاہر کی تو پتا چلا کہ وہ ادارہ جو حکومت کو کئی سو ارب روپے سالانہ منافع دیتا تھا، وہ مالی سال 2019ء کے اختتام پر ایک ارب 4 کروڑ روپے سے زائد کے خسارے کا شکار ہوگیا ہے۔ واضح رہے کہ محض ایک سال پہلے ہی اسٹیٹ بینک کو 175 ارب 67 کروڑ روپے سے زائد کا نفع ہوا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں